کہیں پھر کچھ نہ ہوجائے۔۔۔

inseurity

 
کبھِی جو مہربان ہوکر
ہمیں رستے بلاتے ہیں
ہمارے سنگ چلنے کو
قدم وہ بھی بڑھاتے ہیں
اندیشے گھیریں سوچوں کو
وہم پھر ۔۔۔ روکیں قدموں کو
کہیں منزل نہ کھوجائے
کہیں کچھ پھر نہ ہوجائے
 
ہیں منظر دلنشیں۔۔ بے شک
بہت دلکش ہے ، یہ موسم
رفاقت بھی میسر ہے
بڑا پرکیف ۔۔ ہے عالم
مگر ممکن ، ہو سب دھوکہ
فقط ہو کھیل لمحوں کا
کہیں پھرسب نہ کھو ہوجائے
کہیں کچھ پھر نہ ہوجائے
بھٹک کر ، کھو گئے ہیں
مٹ چکے ہیں ، کارواں کتنے
ہیں دور اپنی بھی منزل
فاصلے ہیں درمیاں کتنے
ارادہ اب سفر کا ۔۔۔
کوچ کا یارا۔۔۔ نہیں ممکن
نہیں ممکن ہے عزم نو
دوبارہ … نہیں ممکن
کہیں موسم، سفر، یا ہم سفر
نا مہرباں ہو جائے
کہیں پھر سب نہ کھو جائے
کہیں پھر کچھ نہ ہوجائے
 

Advertisements

اندر کی بات ۔۔۔

sufi3

برابر ۔۔۔ گفتگو بھی ہے
مگر ۔۔۔ اک خامشی بھی ہے
ہے کیا صورت مجھے درپیش ،
سمجھنے سے میں ہوں قاصر
 
مسلسل سوچ میں ہوں میں
مکمل ہوش میں ہوں کب
کبھِی غائب ہوں ، ہوکر بھی
کبھی نہ ہوکے، ہوں حاضر
 
یہاں اسرار در اسرار
میں حیرت میں مسلسل گُم
یہاں ہے راز ہر شے میں
سبھی مخفی ، ہیں کب ظاہر؟
 
عجب سی محویت طاری
عجب بے خود ہوئی ، ہستی
کبھی سنگیت میں ہے گُم
کبھِی رقصاں ہے یہ شاعر
 
یہاں ہیں رابطے دل کے
کسی ان دیکھی دنیا سے
جو چشمِ من نے ہیں دیکھے
مناظر وہ نہیں ۔۔۔ باہر
 

رائٹر ۔۔۔

images

ہُنر لکھنے کا رکھتے ہو۔۔۔

کبھی کچھ

ایسا  بھی لکھنا

کہ پڑھ کے

 جس کو ایسا ہو۔۔۔

کسی کی چشم تر میں پھر

 کئی  جگنو سے

 جھلملانے لگیں

اور ۔۔۔ آنسوبھی

 مسکرانے لگیں

 

کبِھی  تعبیریں ۔۔

 اگر لکھو ۔۔

تو یوں  لکھنا

                                            کہ خوابوں کے  تعا قب میں

 مسافرپھر روانہ ہوں

  سفر یہ رائیگاں نہ ہو

  کوئی سبق نئی

 امید کا بھی یوں دینا  پھر

کہ تمنا َ۔۔لاحاصل کے

 پورا ہونے کی خواہش میں

 تمام عمر  بسر ہو جائے

  ختم آخر یہ سفر ہوجائے

کوئی ذکر کرنا

 کسی ایسے جذبے کابھی

کہ اہل زمانہ

 چاہے  نا جا نتے ہوں جسے

نا مانتے ہوں جسے

مگر یہ ۔۔۔ اہل جنوں

 جسے محبت کہتے ہوں

کسی ہجر۔۔

 کسی فراق ۔۔۔

 کی بات نہ کرنا

کہ ٹوٹے دل کو

 صدموں کی تاب

 کم ہی ہوتی ہے

کبھی تم سے جو ممکن ہو

تو چاہے جھوٹ ہی کہنا

مگر کچھ ایسا بھی لکھںا

 مریضِ لا دوا کوجس سے

کوئی مسیحا مل جائے

کسی بھٹکے ہوئے کو کوئی

 راہ نما  مل جائے

کسی خوش فہم

کی تسکین کے لئے

کوئی قصہ وفا

  بھی لکھ دینا

کہ اہل دل کو محبت پہ

اک بارپھرسے

 اعتبار آجائے

بے قراریَ دل  کو

پھر قرار آجائے

کچھ بھِی ہو ، بے وجہ نہیں ہوتا۔۔۔

e

روز محشر  بپا نہیں ہوتا

ورنہ دُنیا  میں کیا نہیں ہوتا

ہیں مکیں دل کے ، ایک مد ت سے

   ہاں  ، مگر  سا منا نہیں ہوتا

اتنے اخلاص سے ہے کیا حاصل ؟

ہر کوئی آپ کا نہیں ہوتا

اُس جگہ جا کے دل یہ لگتا ہے

کوئی بھی جس  جگہ ۔۔  نہیں ہوتا

آج تیرا ہے۔۔۔۔ ہو یہ کل  کس کا

وقت۔۔۔ کا کچھ پتا نہیں ہوتا

کچھ وجہ ہوتی ہے ، کچھ ہونے کی

کچھ بھی ہو ۔۔۔   بے وجہ نہیں ہوتا

جس کو لگ جاتی ہے لگن اُس کی

پھر  ۔۔۔       کسی کام کا نہیں ہوتا

۔۔

تسلُط

DOMINATION

کتنے اد وار سے گذرتے ہوئے

عمر اپنی  میں بسر کرتا رہا

ہر لمحہ، بن کے  خواب بیت گیا

آنکھ کھولی،  شباب بیت گیا

کب ہوا سب یہ ،بے خبر میں رہا

اور دبے پاوں  وقت ، گذ رتا رہا

ٹوٹے خوابوں کی کرچیاں من میں

مانندِ کانچ یوں ہی  چُبھتی رہی

ان کے ٹکڑے رہے یوں پیوست پھر

 قطرہ قطرہ ، لہو ٹپکتا رہا

خواہشیں، خواب اور یادیں کیوں

عمر بھر ساتھ ساتھ چلتے ہیں

اس  تسلط سے جاں نہیں چُھٹتی

بوجھ سے ان کے یونہی مرتا رہا

شکوہ ۔۔۔ ممتا سے

 

ح

مانا ۔۔۔ تیری بیٹی نہ تھی

نہ میں تیرا بیٹا تھا

لیکن تُو تو ماں تھی میری

میں تیرا ہی  بچّہ تھا

کیسے مجھ کو تھا  ٹُھکرایا ؟

کیوں نفرت سے مُنہ تھا  موڑا

کیسے پھر لوگوں کے ڈرسے

مجھ کو غیروں میں جا چھوڑا

کیسے کیسے روگ لگے پھر

کیسے کیسے لوگ ملے پھر

کیا کیا جھیلا ہے اس  تن پر

کتنے گھاو ہیں میرے  من پر

دیکھ مگر پھر بھِی ہوں زندہ

اس جینے پر ہوں شرمندہ

لوگوں کا کیا، تجھ سے گلا ہے

یہ جیون تو تجھ سے ملا ہے

میرے لئے کیوں تو نہ  روئی ؟

کبھی دعا نہ مانگی       کوئی

کیوں حق تیرا مجھ پہ نہیں ہے؟

رشتہ کوئی تجھ سے نہیں ہے؟

کیوں جاگی نہ تیری ممتا؟

کیوں نہ جوڑا مجھ سے ناطہ

مجھکواپنے   پاس تو رکھتی

اپنی تُو اولاد   ۔۔۔۔۔ سمجھتی

اب میں سمجھا بات اصل جو

نکتہ اصل ہے، راز اصل جو

تیری دعائیں ہیں  خود غرضی

تیرے آنسو بھِی ہیں مطلب

 سب ہیں د کھاوا ممتا تیری

سب ہے دھوکہ تیری چاہت

تیری آنکھ کا تارا ہوتا

تجھ کو جان سے پیارا ہوتا

تیرے دل کا ٹکڑا ہوتا

گر میں  تیرا بیٹا ہوتا